Mirza Hadi Ruswa's Photo'

مرزا ہادی رسوا

1858 - 1931 | لکھنؤ, ہندوستان

غزل 3

 

اشعار 18

دلی چھٹی تھی پہلے اب لکھنؤ بھی چھوڑیں

دو شہر تھے یہ اپنے دونوں تباہ نکلے

  • شیئر کیجیے

لب پہ کچھ بات آئی جاتی ہے

خامشی مسکرائی جاتی ہے

  • شیئر کیجیے

بعد توبہ کے بھی ہے دل میں یہ حسرت باقی

دے کے قسمیں کوئی اک جام پلا دے ہم کو

  • شیئر کیجیے

دیکھا ہے مجھے اپنی خوشامد میں جو مصروف

اس بت کو یہ دھوکا ہے کہ اسلام یہی ہے

  • شیئر کیجیے

کیا کہوں تجھ سے محبت وہ بلا ہے ہمدم

مجھ کو عبرت نہ ہوئی غیر کے مر جانے سے

  • شیئر کیجیے

کتاب 24

اختری بیگم

 

1952

بہرام کی رہائی

 

 

خونی عاشق

 

1987

خونی جورو

 

 

خونی عاشق

 

1987

لیلیٰ مجنوں

 

1963

مرزا ہادی رسوا

 

1985

مرزا رسوا کے ناولوں کے نسوانی کردار

 

1995

مرزا رسوا کے تنقیدی مراسلات

 

1961

مرقع لیلیٰ مجنوں

 

1963

متعلقہ فن کاروں

  • ثاقب لکھنوی ثاقب لکھنوی ہم عصر

"لکھنؤ" کے مزید فن کاروں

  • شانتی ہیرانند شانتی ہیرانند