آئنہ دیکھیں نہ ہم عکس ہی اپنا دیکھیں

ظفر اقبال ظفر

آئنہ دیکھیں نہ ہم عکس ہی اپنا دیکھیں

ظفر اقبال ظفر

MORE BY ظفر اقبال ظفر

    آئنہ دیکھیں نہ ہم عکس ہی اپنا دیکھیں

    جب بھی دیکھیں تو ہم اپنے کو اکیلا دیکھیں

    موم کے لوگ کڑی دھوپ میں آ بیٹھے ہیں

    آؤ اب ان کے پگھلنے کا تماشا دیکھیں

    تب یہ احساس ہمیں ہوگا کہ یہ خواب ہے سب

    بند آنکھوں کو کریں خواب کی دنیا دیکھیں

    بات کرتے ہیں تو نشتر سا اتر جاتا ہے

    اب وہ لہجے کی تمازت کا خسارہ دیکھیں

    تو نے نظریں نہ ملانے کی قسم کھائی ہے

    آئنہ سامنے رکھ کر ترا چہرہ دیکھیں

    کوئی بھی شے حسیں لگتی نہیں جب تیرے سوا

    یہ بتا شہر میں ہم تیرے سوا کیا دیکھیں

    قتل اور خوں کے مناظر ہیں جو بستی بستی

    کیسے انسانوں کی دنیا کا تماشہ دیکھیں

    اتنا ویرانی سے رشتہ ہے ظفرؔ اپنا اب

    خواب کی دنیا میں بھی صحرا ہی صحرا دیکھیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY