آتا ہے یہی جی میں فریاد کروں روؤں

مصحفی غلام ہمدانی

آتا ہے یہی جی میں فریاد کروں روؤں

مصحفی غلام ہمدانی

MORE BYمصحفی غلام ہمدانی

    آتا ہے یہی جی میں فریاد کروں روؤں

    رونے ہی سے ٹک اپنا دل شاد کروں روؤں

    کس واسطے بیٹھا ہے چپ اتنا تو اے ہم دم

    کیا میں ہی کوئی نوحہ بنیاد کروں روؤں

    یوں دل میں گزرتا ہے جا کر کسی صحرا میں

    خاطر کو ٹک اک غم سے آزاد کروں روؤں

    اس واسطے فرقت میں جیتا مجھے رکھا ہے

    یعنی میں تری صورت جب یاد کروں روؤں

    اے مصحفیؔ آتا ہے یہ دل میں کہ اب میں بھی

    رونے میں تجھے اپنا استاد کروں روؤں

    مآخذ:

    • کتاب : kulliyat-e-mas.hafii(awwa) (Pg. 253)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY