اب ملاقات کہاں شیشے سے پیمانے سے

بسمل  عظیم آبادی

اب ملاقات کہاں شیشے سے پیمانے سے

بسمل  عظیم آبادی

MORE BYبسمل  عظیم آبادی

    اب ملاقات کہاں شیشے سے پیمانے سے

    فاتحہ پڑھ کے چلے آئے ہیں مے خانے سے

    کیا کریں جام و سبو ہاتھ پکڑ لیتے ہیں

    جی تو کہتا ہے کہ اٹھ جائیے مے خانے سے

    پھونک کر ہم نے ہر اک گام پہ رکھا ہے قدم

    آسماں پھر بھی نہ باز آیا ستم ڈھانے سے

    ہم کو جب آپ بلاتے ہیں چلے آتے ہیں

    آپ بھی تو کبھی آ جائیے بلوانے سے

    ارے او وعدہ فراموش پہاڑ ایسی رات

    کیا کہوں کیسے کٹی تیرے نہیں آنے سے

    یاد رکھ! وقت کے انداز نہیں بدلیں گے

    ارے اللہ کے بندے ترے گھبرانے سے

    سر چڑھائیں کبھی آنکھوں سے لگائیں ساقی

    تیرے ہاتھوں کی چھلک جائے جو پیمانے سے

    خالی رکھی ہوئی بوتل یہ پتا دیتی ہے

    کہ ابھی اٹھ کے گیا ہے کوئی مے خانے سے

    آئے گی حشر کی ناصح کی سمجھ میں کیا خاک

    جب سمجھ دار سمجھتے نہیں سمجھانے سے

    برق کے ڈر سے کلیجے سے لگائے ہوئے ہے

    چار تنکے جو اٹھا لائی ہے ویرانے سے

    دل ذرا بھی نہ پسیجا بت کافر تیرا

    کعبہ اللہ کا گھر بن گیا بت خانے سے

    شمع بیچاری جو اک مونس تنہائی تھی

    بجھ گئی وہ بھی سر شام ہوا آنے سے

    غیر کاہے کو سنیں گے ترا دکھڑا بسملؔ

    ان کو فرصت کہاں ہے اپنی غزل گانے سے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY