اب وہ گھر اک ویرانہ تھا بس ویرانہ زندہ تھا

جون ایلیا

اب وہ گھر اک ویرانہ تھا بس ویرانہ زندہ تھا

جون ایلیا

MORE BY جون ایلیا

    اب وہ گھر اک ویرانہ تھا بس ویرانہ زندہ تھا

    سب آنکھیں دم توڑ چکی تھیں اور میں تنہا زندہ تھا

    ساری گلی سنسان پڑی تھی باد فنا کے پہرے میں

    ہجر کے دالان اور آنگن میں بس اک سایہ زندہ تھا

    وہ جو کبوتر اس موکھے میں رہتے تھے کس دیس اڑے

    ایک کا نام نوازندہ تھا اور اک کا بازندہ تھا

    وہ دوپہر اپنی رخصت کی ایسا ویسا دھوکا تھی

    اپنے اندر اپنی لاش اٹھائے میں جھوٹا زندہ تھا

    تھیں وہ گھر راتیں بھی کہانی وعدے اور پھر دن گننا

    آنا تھا جانے والے کو جانے والا زندہ تھا

    دستک دینے والے بھی تھے دستک سننے والے بھی

    تھا آباد محلہ سارا ہر دروازہ زندہ تھا

    پیلے پتوں کو سہ پہر کی وحشت پرسا دیتی تھی

    آنگن میں اک اوندھے گھڑے پر بس اک کوا زندہ تھا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نازش

    نازش

    مآخذ:

    • Book: shaayed (Pg. 178)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites