اے اہل وفا خاک بنے کام تمہارا

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

اے اہل وفا خاک بنے کام تمہارا

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BYوحشتؔ رضا علی کلکتوی

    اے اہل وفا خاک بنے کام تمہارا

    آغاز بتا دیتا ہے انجام تمہارا

    جاتے ہو کہاں عشق کے بیداد کشو تم

    اس انجمن ناز میں کیا کام تمہارا

    اے دیدہ و دل کچھ تو کرو ضبط و تحمل

    لبریز مئے شوق سے ہے جام تمہارا

    اے کاش مرے قتل ہی کا مژدہ وہ ہوتا

    آتا کسی صورت سے تو پیغام تمہارا

    وحشتؔ ہو مبارک تمہیں بدمستی و رندی

    جز عشق بتاں اور ہے کیا کام تمہارا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اے اہل وفا خاک بنے کام تمہارا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY