اپنی تنہائی مرے نام پہ آباد کرے

پروین شاکر

اپنی تنہائی مرے نام پہ آباد کرے

پروین شاکر

MORE BYپروین شاکر

    اپنی تنہائی مرے نام پہ آباد کرے

    کون ہوگا جو مجھے اس کی طرح یاد کرے

    دل عجب شہر کہ جس پر بھی کھلا در اس کا

    وہ مسافر اسے ہر سمت سے برباد کرے

    اپنے قاتل کی ذہانت سے پریشان ہوں میں

    روز اک موت نئے طرز کی ایجاد کرے

    اتنا حیراں ہو مری بے طلبی کے آگے

    وا قفس میں کوئی در خود مرا صیاد کرے

    سلب بینائی کے احکام ملے ہیں جو کبھی

    روشنی چھونے کی خواہش کوئی شب زاد کرے

    سوچ رکھنا بھی جرائم میں ہے شامل اب تو

    وہی معصوم ہے ہر بات پہ جو صاد کرے

    جب لہو بول پڑے اس کے گواہوں کے خلاف

    قاضئ شہر کچھ اس باب میں ارشاد کرے

    اس کی مٹھی میں بہت روز رہا میرا وجود

    میرے ساحر سے کہو اب مجھے آزاد کرے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نامعلوم

    نامعلوم

    RECITATIONS

    صبیحہ خان

    صبیحہ خان,

    صبیحہ خان

    اپنی تنہائی مرے نام پہ آباد کرے صبیحہ خان

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے