باد صحرا کو رہ شہر پہ ڈالا کس نے

علی اکبر ناطق

باد صحرا کو رہ شہر پہ ڈالا کس نے

علی اکبر ناطق

MORE BYعلی اکبر ناطق

    باد صحرا کو رہ شہر پہ ڈالا کس نے

    تار وحشت کو گریباں سے نکالا کس نے

    مختصر بات تھی، پھیلی کیوں صبا کی مانند

    درد مندوں کا فسانہ تھا، اچھالا کس نے

    بستیوں والے تو خود اوڑھ کے پتے، سوئے

    دل آوارہ تجھے رات سنبھالا کس نے

    آگ پھولوں کی طلب میں تھی، ہواؤں پہ رکی

    نذر جاں کس کی ہوئی، راہ سے ٹالا کس نے

    کانچ کی راہ پہ اک رسم سفر تھی مجھ سے

    بعد میرے بنا ہر گام پہ جالا کس نے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے