بخشش ہے تیری ہاتھ میں دنیا لیے ہوئے

جمیلؔ مظہری

بخشش ہے تیری ہاتھ میں دنیا لیے ہوئے

جمیلؔ مظہری

MORE BYجمیلؔ مظہری

    بخشش ہے تیری ہاتھ میں دنیا لیے ہوئے

    میں چپ کھڑا ہوں دیدۂ بینا لیے ہوئے

    صحرا کو کیا خبر کہ ہے ہر ذرۂ حقیر

    مٹھی میں اپنی قسمت صحرا لیے ہوئے

    اس شام سے ڈرو جو ستاروں کی چھاؤں میں

    آتی ہو اک حسین اندھیرا لیے ہوئے

    اے وقت اک نگاہ کہ کب سے کھڑے ہیں ہم

    آئینۂ تصور فردا لیے ہوئے

    گزرا تھا اس دیار سے سورج کا اک سفیر

    ہر نقش پا میں اک ید بیضا لیے ہوئے

    آیا یہ کون سایۂ زلف دراز میں

    پیشانئ سحر کا اجالا لیے ہوئے

    لائی تھی بے خودی جسے اس در پہ وہ جمیلؔ

    جاتا ہے اب خودی کا جنازا لیے ہوئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY