داغ دل چمکا تو غم پیدا ہوا

جوشؔ ملسیانی

داغ دل چمکا تو غم پیدا ہوا

جوشؔ ملسیانی

MORE BY جوشؔ ملسیانی

    داغ دل چمکا تو غم پیدا ہوا

    یہ اندھیرا صبح دم پیدا ہوا

    میں ہوں وہ گم گشتۂ راہ طلب

    میری ہستی سے عدم پیدا ہوا

    ہو گئی ہر ایک بیشی میں کمی

    جب خیال بیش و کم پیدا ہوا

    ان کے آنے کی خوشی کیا چیز تھی

    اس خوشی سے اور غم پیدا ہوا

    مے کدے میں شیخ بھی آیا اگر

    گردن مینا میں خم پیدا ہوا

    حسن میں تخلیق کا جوہر بھی ہے

    اس کے ''میں'' کہنے سے ''ہم'' پیدا ہوا

    یاد ان کی یوں رفیق راہ تھی

    ہر قدم پر ہم قدم پیدا ہوا

    کیا کہیں ہم اس ادائے خاص کو

    ہر کرم سے اک ستم پیدا ہوا

    مرگ کا کچھ بھی نہ تھا اے جوشؔ غم

    ان کے وعدے سے یہ غم پیدا ہوا

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY