درد آ کے بڑھا دو دل کا تم یہ کام تمہیں کیا مشکل ہے

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

درد آ کے بڑھا دو دل کا تم یہ کام تمہیں کیا مشکل ہے

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BYوحشتؔ رضا علی کلکتوی

    درد آ کے بڑھا دو دل کا تم یہ کام تمہیں کیا مشکل ہے

    بیمار بنانا آساں ہے ہر چند مداوا مشکل ہے

    الزام نہ دیں گے ہم تم کو تسکین میں کوئی کی نہ کمی

    وعدہ تو وفا کا تم نے کیا کیا کیجئے ایفا مشکل ہے

    دل توڑ دیا تم نے میرا اب جوڑ چکے تم ٹوٹے کو

    وہ کام نہایت آساں تھا یہ کام بلا کا مشکل ہے

    آغاز سے ظاہر ہوتا ہے انجام جو ہونے والا ہے

    انداز زمانہ کہتا ہے پوری ہو تمنا مشکل ہے

    موقوف کرو اب فکر سخن وحشتؔ نہ کرو اب ذکر سخن

    جو کام کہ بے حاصل ٹھہرا دل اس میں لگانا مشکل ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    درد آ کے بڑھا دو دل کا تم یہ کام تمہیں کیا مشکل ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY