دشت و صحرا اگر بسائے ہیں

شکیب جلالی

دشت و صحرا اگر بسائے ہیں

شکیب جلالی

MORE BYشکیب جلالی

    دشت و صحرا اگر بسائے ہیں

    ہم گلستاں میں کب سمائے ہیں

    آپ نغموں کے منتظر ہوں گے

    ہم تو فریاد لے کے آئے ہیں

    ایک اپنا دیا جلانے کو

    تم نے لاکھوں دیے بجھائے ہیں

    کیا نظر آئے گا ابھی ہم کو

    یک بیک روشنی میں آئے ہیں

    یوں تو سارا چمن ہمارا ہے

    پھول جتنے بھی ہیں پرائے ہیں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    دشت و صحرا اگر بسائے ہیں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY