دیکھنا وہ گریۂ حسرت مآل آ ہی گیا

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

دیکھنا وہ گریۂ حسرت مآل آ ہی گیا

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BYوحشتؔ رضا علی کلکتوی

    دیکھنا وہ گریۂ حسرت مآل آ ہی گیا

    بیکسی میں کوئی تو پرسان حال آ ہی گیا

    جرأت عرض تمنا کا سبب وہ خود ہوئے

    مہرباں دیکھا انہیں لب پر سوال آ ہی گیا

    دل کو ہم کب تک بچائے رکھتے ہر آسیب سے

    ٹھیس آخر لگ گئی شیشے میں بال آ ہی گیا

    بے وفائی سے وفا کا دیتے وہ کب تک جواب

    دل ہی تو ہے رفتہ رفتہ انفعال آ ہی گیا

    خود فراموشی کی لذت نامکمل رہ گئی

    باوجود بے خودی تیرا خیال آ ہی گیا

    ایک مدت سے نہیں ملتا تھا وحشتؔ کا پتا

    لے ترے کوچے میں وہ آشفتہ حال آ ہی گیا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    دیکھنا وہ گریۂ حسرت مآل آ ہی گیا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY