دھیما دھیما درد سہانا ہم کو اچھا لگتا تھا

کرشن ادیب

دھیما دھیما درد سہانا ہم کو اچھا لگتا تھا

کرشن ادیب

MORE BYکرشن ادیب

    دھیما دھیما درد سہانا ہم کو اچھا لگتا تھا

    دکھتے جی کو اور دکھانا ہم کو اچھا لگتا تھا

    زخم کو اپنے پھول سمجھنا موتی کہنا اشکوں کو

    عشق کا کاروبار سجانا ہم کو اچھا لگتا تھا

    دن دن بھر آوارہ پھرنا ایک ہماری عادت تھی

    رات گئے گھر لوٹ کے آنا ہم کو اچھا لگتا تھا

    بیٹھ کے یاروں کی محفل میں پیتے رہنا دیر تلک

    اپنے آپ کو بھول ہی جانا ہم کو اچھا لگتا تھا

    چپ چپ رہنا آہیں بھرنا کچھ نہ کہنا لوگوں سے

    تنہا تنہا اشک بہانا ہم کو اچھا لگتا تھا

    شاخ سے ٹوٹے سوکھے پتے تیز ہوا کے شانوں پر

    شہروں شہروں خاک اڑانا ہم کو اچھا لگتا تھا

    شہر غم کی ایک اداسی دل میں ہر دم رہتی تھی

    دیواروں سے سر ٹکرانا ہم کو اچھا لگتا تھا

    گل بدنوں کو تکتے رہنا باتیں کرنا خوشبو کی

    نگۂ گل کا قرض چکانا ہم کو اچھا لگتا تھا

    نشۂ غم کی سرشاری بھی کم تو نہیں تھی پھر بھی ادیبؔ

    تلخیٔ مے میں زہر ملانا ہم کو اچھا لگتا تھا

    مأخذ :
    • کتاب : AURAAQ (Pg. 247)
    • Author : Wazir Agha, Sajjad Naqvi
    • مطبع : Auraaq Chauk, Urdu Bazar, Lahore (April, May 1982)
    • اشاعت : April, May 1982

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY