دھوپ میں سب رنگ گہرے ہو گئے

محمد علوی

دھوپ میں سب رنگ گہرے ہو گئے

محمد علوی

MORE BYمحمد علوی

    دھوپ میں سب رنگ گہرے ہو گئے

    تتلیوں کے پر سنہرے ہو گئے

    سامنے دیوار پر کچھ داغ تھے

    غور سے دیکھا تو چہرے ہو گئے

    اب نہ سن پائیں گے ہم دل کی پکار

    سنتے سنتے کان بہرے ہو گئے

    اب کسی کی یاد بھی آتی نہیں

    دل پہ اب فکروں کے پہرے ہو گئے

    آؤ علویؔ اب تو اپنے گھر چلیں

    دن بہت دلی میں ٹھہرے ہو گئے

    مآخذ:

    • کتاب : Raat Idhar Udhar Rooshan (Pg. 295)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY