دور ہو درد دل یہ اور درد جگر کسی طرح

بہرام جی

دور ہو درد دل یہ اور درد جگر کسی طرح

بہرام جی

MORE BYبہرام جی

    دور ہو درد دل یہ اور درد جگر کسی طرح

    آج تو ہم نشیں اسے لا مرے گھر کسی طرح

    تیر مژہ ہو یار کا اور نشانہ دل مرا

    تیر پہ تیر تا بہ کے کیجے حذر کسی طرح

    نالہ ہو یا کہ آہ ہو شام ہو یا پگاہ ہو

    دل میں بتوں کے ہائے ہائے کیجے اثر کسی طرح

    آئی شب فراق ہے رات ہے سخت یہ بہت

    کیجے شمار اختراں تا ہو سحر کسی طرح

    عشق میں دل سے ہم ہوئے محو تمہارے اے بتو

    خالی ہیں چشم و دل کرو ان میں گزر کسی طرح

    مآخذ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY