ایک میں بھی ہوں کلہ داروں کے بیچ

عبید اللہ علیم

ایک میں بھی ہوں کلہ داروں کے بیچ

عبید اللہ علیم

MORE BYعبید اللہ علیم

    ایک میں بھی ہوں کلہ داروں کے بیچ

    میرؔ صاحب کے پرستاروں کے بیچ

    روشنی آدھی ادھر آدھی ادھر

    اک دیا رکھا ہے دیواروں کے بیچ

    میں اکیلی آنکھ تھا کیا دیکھتا

    آئینہ خانہ تھے نظاروں کے بیچ

    ہے یقیں مجھ کو کہ سیارے پہ ہوں

    آدمی رہتے ہیں سیاروں کے بیچ

    کھا گیا انساں کو آشوب معاش

    آ گئے ہیں شہر بازاروں کے بیچ

    میں فقیر ابن فقیر ابن فقیر

    اور اسکندر ہوں سرداروں کے بیچ

    اپنی ویرانی کے گوہر رولتا

    رقص میں ہوں اور بازاروں کے بیچ

    کوئی اس کافر کو اس لمحے سنے

    گفتگو کرتا ہے جب یاروں کے بیچ

    اہل دل کے درمیاں تھے میرؔ تم

    اب سخن ہے شعبدہ کاروں کے بیچ

    آنکھ والے کو نظر آئے علیمؔ

    اک محمد مصطفی ساروں کے بیچ

    مآخذ
    • کتاب : Veeran sarai ka diya (Pg. 43)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY