فلک دیتا ہے جن کو عیش ان کو غم بھی ہوتے ہیں

داغؔ دہلوی

فلک دیتا ہے جن کو عیش ان کو غم بھی ہوتے ہیں

داغؔ دہلوی

MORE BY داغؔ دہلوی

    فلک دیتا ہے جن کو عیش ان کو غم بھی ہوتے ہیں

    جہاں بجتے ہیں نقارے وہیں ماتم بھی ہوتے ہیں

    گلے شکوے کہاں تک ہوں گے آدھی رات تو گزری

    پریشاں تم بھی ہوتے ہو پریشاں ہم بھی ہوتے ہیں

    جو رکھے چارہ گر کافور دونی آگ لگ جائے

    کہیں یہ زخم دل شرمندہ مرہم بھی ہوتے ہیں

    وہ آنکھیں سامری فن ہیں وہ لب عیسیٰ نفس دیکھو

    مجھی پر سحر ہوتے ہیں مجھی پر دم بھی ہوتے ہیں

    زمانہ دوستی پر ان حسینوں کی نہ اترائے

    یہ عالم دوست اکثر دشمن عالم بھی ہوتے ہیں

    بظاہر رہنما ہیں اور دل میں بدگمانی ہے

    ترے کوچے میں جو جاتا ہے آگے ہم بھی ہوتے ہیں

    ہمارے آنسوؤں کی آبداری اور ہی کچھ ہے

    کہ یوں ہونے کو روشن گوہر شبنم بھی ہوتے ہیں

    خدا کے گھر میں کیا ہے کام زاہد بادہ خواروں کا

    جنہیں ملتی نہیں وہ تشنۂ زمزم بھی ہوتے ہیں

    ہمارے ساتھ ہی پیدا ہوا ہے عشق اے ناصح

    جدائی کس طرح سے ہو جدا توام بھی ہوتے ہیں

    نہیں گھٹتی شب فرقت بھی اکثر ہم نے دیکھا ہے

    جو بڑھ جاتے ہیں حد سے وہ ہی گھٹ کر کم بھی ہوتے ہیں

    بچاؤں پیرہن کیا چارہ گر میں دست وحشت سے

    کہیں ایسے گریباں دامن مریم بھی ہوتے ہیں

    طبیعت کی کجی ہرگز مٹائے سے نہیں مٹتی

    کبھی سیدھے تمہارے گیسوئے پر خم بھی ہوتے ہیں

    جو کہتا ہوں کہ مرتا ہوں تو فرماتے ہیں مر جاؤ

    جو غش آتا ہے تو مجھ پر ہزاروں دم بھی ہوتے ہیں

    کسی کا وعدۂ دیدار تو اے داغؔ برحق ہے

    مگر یہ دیکھیے دل شاد اس دن ہم بھی ہوتے ہیں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    فلک دیتا ہے جن کو عیش ان کو غم بھی ہوتے ہیں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY