غیروں سے مل کے ہی سہی بے باک تو ہوا

منیر نیازی

غیروں سے مل کے ہی سہی بے باک تو ہوا

منیر نیازی

MORE BY منیر نیازی

    غیروں سے مل کے ہی سہی بے باک تو ہوا

    بارے وہ شوخ پہلے سے چالاک تو ہوا

    جی خوش ہوا ہے گرتے مکانوں کو دیکھ کر

    یہ شہر خوف خود سے جگر چاک تو ہوا

    یہ تو ہوا کہ آدمی پہنچا ہے ماہ تک

    کچھ بھی ہوا وہ واقف افلاک تو ہوا

    کچھ اور وہ ہوا نہ ہوا مجھ کو دیکھ کر

    یاد بہار حسن سے غم ناک تو ہوا

    اس کشمکش میں ہم بھی تھکے تو ہیں اے منیرؔ

    شہر خدا ستم سے مگر پاک تو ہوا

    مآخذ:

    • Book: kulliyat-e-muniir niyaazii (Pg. 405)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites