گلے ملا نہ کبھی چاند بخت ایسا تھا

شکیب جلالی

گلے ملا نہ کبھی چاند بخت ایسا تھا

شکیب جلالی

MORE BYشکیب جلالی

    گلے ملا نہ کبھی چاند بخت ایسا تھا

    ہرا بھرا بدن اپنا درخت ایسا تھا

    ستارے سسکیاں بھرتے تھے اوس روتی تھی

    فسانۂ جگر لخت لخت ایسا تھا

    ذرا نہ موم ہوا پیار کی حرارت سے

    چٹخ کے ٹوٹ گیا دل کا سخت ایسا تھا

    یہ اور بات کہ وہ لب تھے پھول سے نازک

    کوئی نہ سہہ سکے لہجہ کرخت ایسا تھا

    کہاں کی سیر نہ کی توسن تخیل پر

    ہمیں تو یہ بھی سلیماں کے تخت ایسا تھا

    ادھر سے گزرا تھا ملک سخن کا شہزادہ

    کوئی نہ جان سکا ساز و رخت ایسا تھا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    گلے ملا نہ کبھی چاند بخت ایسا تھا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY