غم و نشاط کی ہر رہ گزر میں تنہا ہوں

مخمور سعیدی

غم و نشاط کی ہر رہ گزر میں تنہا ہوں

مخمور سعیدی

MORE BYمخمور سعیدی

    غم و نشاط کی ہر رہ گزر میں تنہا ہوں

    مجھے خبر ہے میں اپنے سفر میں تنہا ہوں

    مجھی پہ سنگ ملامت کی بارشیں ہوں گی

    کہ اس دیار میں شوریدہ سر میں تنہا ہوں

    ترے خیال کے جگنو بھی ساتھ چھوڑ گئے

    اداس رات کے سونے کھنڈر میں تنہا ہوں

    گراں نہیں ہے کسی پر یہ رات میرے سوا

    کہ مبتلا میں امید سحر میں تنہا ہوں

    نہ چھوڑ ساتھ مرا ان اکیلی راہوں میں

    دل خراب ترا ہم سفر میں تنہا ہوں

    وہ بے نیاز کہ دیکھی ہو جیسے اک دنیا

    مجھے یہ ناز میں اس کی نظر میں تنہا ہوں

    مجھی سے کیوں ہے خفا میرا آئینہ مخمورؔ

    اس اندھے شہر میں کیا خود نگر میں تنہا ہوں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    غم و نشاط کی ہر رہ گزر میں تنہا ہوں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY