غم سے منسوب کروں درد کا رشتہ دے دوں

علی احمد جلیلی

غم سے منسوب کروں درد کا رشتہ دے دوں

علی احمد جلیلی

MORE BYعلی احمد جلیلی

    غم سے منسوب کروں درد کا رشتہ دے دوں

    زندگی آ تجھے جینے کا سلیقہ دے دوں

    بے چراغی یہ تری شام غریباں کب تک

    چل تجھے جلتے مکانوں کا اجالا دے دوں

    زندگی اب تو یہی شکل ہے سمجھوتے کی

    دور ہٹ جاؤں تری راہ سے رستا دے دوں

    تشنگی تجھ کو بجھانا مجھے منظور نہیں

    ورنہ قطرہ کی ہے کیا بات میں دریا دے دوں

    لی ہے انگڑائی تو پھر ہاتھ اٹھا کر رکھیے

    ٹھہریے میں اسے لفظوں کا لبادہ دے دوں

    اے مرے فن تجھے تکمیل کو پہنچانا ہے

    آ تجھے خون کا میں آخری قطرہ دے دوں

    سورج آ جائے کسی دن جو میرے ہاتھ علیؔ

    گھونٹ دوں رات کا دم سب کو اجالا دے دوں

    مأخذ :
    • کتاب : Mujalla Dastavez (Pg. 239)
    • Author : Aziz Nabeel
    • مطبع : Edarah Dastavez (2010)
    • اشاعت : 2010

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY