گرچہ نیزوں پہ سر ہے

عبدالصمد تپشؔ

گرچہ نیزوں پہ سر ہے

عبدالصمد تپشؔ

MORE BYعبدالصمد تپشؔ

    گرچہ نیزوں پہ سر ہے

    موت تو وقت پر ہے

    کون پتھر اٹھائے

    یہ شجر بے ثمر ہے

    گھونسلہ زندگی کا

    سانس کی شاخ پر ہے

    کوئی دشمن نہیں ہے

    مجھ کو اپنا ہی ڈر ہے

    شک بھی کیجے تو کس پر

    وہ بڑا معتبر ہے

    زد میں آندھی کے اکثر

    ایک میرا ہی گھر ہے

    اپنی پہچان رکھنا

    بھیڑ ہر موڑ پر ہے

    میرے مولا تپشؔ کو

    عشق خیرالبشر ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Mata-e-Aainda (Pg. 10)
    • Author : Abdussamad Tapish
    • مطبع : Abdussamad Tapish (2000)
    • اشاعت : 2000

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے