گھر کا رستہ جو بھول جاتا ہوں

اظہر عنایتی

گھر کا رستہ جو بھول جاتا ہوں

اظہر عنایتی

MORE BYاظہر عنایتی

    گھر کا رستہ جو بھول جاتا ہوں

    کیا بتاؤں کہاں سے آتا ہوں

    ذہن میں خواب کے محل کی طرح

    خود ہی بنتا ہوں ٹوٹ جاتا ہوں

    آج بھی شام غم! اداس نہ ہو

    مانگ کر میں چراغ لاتا ہوں

    میں تو اے شہر کے حسیں رستو

    گھر سے ہی قتل ہو کے آتا ہوں

    روز آتی ہے ایک شخص کی یاد

    روز اک پھول توڑ لاتا ہوں

    ہائے گہرائیاں ان آنکھوں کی

    بات کرتا ہوں ڈوب جاتا ہوں

    مأخذ :
    • کتاب : jhunka na-e-mausam kaa (Pg. 199)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY