گھر کی حد میں صحرا ہے

آشفتہ چنگیزی

گھر کی حد میں صحرا ہے

آشفتہ چنگیزی

MORE BYآشفتہ چنگیزی

    گھر کی حد میں صحرا ہے

    آگے دریا بہتا ہے

    حیرت تک مفقود ہوئی

    اتنا دیکھا بھالا ہے

    جانے کیا افتاد پڑے

    خواب میں اس کو دیکھا ہے

    آہٹ کیسی بستی میں

    کون یہ رستہ بھولا ہے

    رستے اپنے اپنے ہیں

    کون کسی کو سمجھا ہے

    قید سے وحشی چھوٹ گئے

    دیکھیں کیا گل کھلتا ہے

    اڑنے والا پنچھی کیوں

    پنکھ سمیٹے بیٹھا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY