گناہ گار تو رحمت کو منہ دکھا نہ سکا

نشور واحدی

گناہ گار تو رحمت کو منہ دکھا نہ سکا

نشور واحدی

MORE BYنشور واحدی

    گناہ گار تو رحمت کو منہ دکھا نہ سکا

    جو بے گناہ تھا وہ بھی نظر ملا نہ سکا

    طرب ہے شیوۂ رندان عاقبت نا شناس

    جو گل نہ تھا وہ گلستاں میں مسکرا نہ سکا

    بہت خفیف تھی کون و مکاں کی جلوہ گری

    مری نگاہ کا گوشہ بھی جگمگا نہ سکا

    حوالۂ نگۂ شرمگیں ہوئیں آخر

    وہ بجلیاں جو کہیں آسماں گرا نہ سکا

    بدیعہ کار ہے ذہن خرد پسند مگر

    تصورات سے تصویر غم بنا نہ سکا

    عجب نہیں کہ گلستاں میں پا بہ گل رہ جائے

    وہ بد نصیب جو رمز خرام پا نہ سکا

    جیا وہ پاک جو رکھتا تھا خار پیراہن

    جو گل بہ جیب تھا دامن کبھی بچا نہ سکا

    نشورؔ نازکیٔ طبع شعر کیا کہئے

    جہاں میں رہ کے زمانے کے ناز اٹھا نہ سکا

    مآخذ:

    • کتاب : Sawad-e-manzil (Pg. 215)
    • Author : Nushoor Wahedi
    • مطبع : Maktaba Jamia Ltd, Delhi (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY