ہر شے لمحے کی مہماں ہے کیا گل کیا خوشبو

منظور عارف

ہر شے لمحے کی مہماں ہے کیا گل کیا خوشبو

منظور عارف

MORE BYمنظور عارف

    ہر شے لمحے کی مہماں ہے کیا گل کیا خوشبو

    کیا مے کیا نشۂ آئینہ کیا آئینہ رو

    مورنی کی یہ خواہش وجد میں آ کر ناچے مور

    پیاس بجھانے کو دے دے بس دو قطرے آنسو

    کیا تھا وہ لمحوں کی رفاقت ہو گئی خواب و خیال

    تجھ بن ساری عمر رہا خالی میرا پہلو

    ذہنی رشتے قلبی ناطے سب اغراض پسند

    سب لمحوں کے جادوگر ہیں کیا میں اور کیا تو

    عارفؔ کیا تدبیر ہو اس کو کیسے رام کروں

    میں اک خالی ہاتھ شکاری وہ اک تیز آہو

    مآخذ :
    • کتاب : Khayaabaan (Pg. 112)
    • Author : Hassan Abbas Raza
    • مطبع : Bazm-e-Khayaabaan-e-adab, Pakistan

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY