اس ابتدا کی سلیقے سے انتہا کرتے

انور مسعود

اس ابتدا کی سلیقے سے انتہا کرتے

انور مسعود

MORE BY انور مسعود

    اس ابتدا کی سلیقے سے انتہا کرتے

    وہ ایک بار ملے تھے تو پھر ملا کرتے

    کواڑ گرچہ مقفل تھے اس حویلی کے

    مگر فقیر گزرتے رہے صدا کرتے

    ہمیں قرینۂ رنجش کہاں میسر ہے

    ہم اپنے بس میں جو ہوتے ترا گلا کرتے

    تری جفا کا فلک سے نہ تذکرہ چھیڑا

    ہنر کی بات کسی کم ہنر سے کیا کرتے

    تجھے نہیں ہے ابھی فرصت کرم نہ سہی

    تھکے نہیں ہیں مرے ہاتھ بھی دعا کرتے

    انہیں شکایت بے ربطی سخن تھی مگر

    جھجک رہا تھا میں اظہار مدعا کرتے

    چقیں گری تھیں دریچوں پہ چار سو انورؔ

    نظر جھکا کے نہ چلتے تو اور کیا کرتے

    مآخذ:

    • Book : ik daraicha ik chirag (Pg. 70)
    • Author : ANWAR MASOOD
    • مطبع : Dost Publications (2008)
    • اشاعت : 2008

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY