جان کر کہتا ہے ہم سے اپنے جانے کی خبر

حسرتؔ عظیم آبادی

جان کر کہتا ہے ہم سے اپنے جانے کی خبر

حسرتؔ عظیم آبادی

MORE BYحسرتؔ عظیم آبادی

    جان کر کہتا ہے ہم سے اپنے جانے کی خبر

    جی ڈوبا دیتی ہے میرا یہ بہانے کی خبر

    اس چمن میں کون ہے دل سوز اپنا تجھ سوا

    رکھیو ٹک اے برق میرے آشیانے کی خبر

    پوچھتا نیں اپنے کوچے میں تو میرا حال ہائے

    لے تھی لیلیٰ دشت میں اپنے دوانے کی خبر

    ہیں قفس میں جب سے ہم اس سنگ دل صیاد کے

    اشک ہی لیتا ہے میرا آب و دانے کی خبر

    ہم نہ جانیں کس طرف کعبہ ہے اور کیدھر ہے دیر

    ایک رہتی ہے یہی اس در پہ جانے کی خبر

    ہر گل داغ جنوں پر اور ہے کچھ آب و رنگ

    پھیر ہے گلشن میں گویا گل کے آنے کی خبر

    آج سینے میں مرے دل ہے نپٹ ہی بے قرار

    دے ہے حسرتؔ غیر کے گھر اس کے جانے کی خبر

    مأخذ :
    • Deewan-e-Hasrat Azeemabadi

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY