جی اٹھے حشر میں پھر جی سے گزرنے والے

ریاضؔ خیرآبادی

جی اٹھے حشر میں پھر جی سے گزرنے والے

ریاضؔ خیرآبادی

MORE BY ریاضؔ خیرآبادی

    جی اٹھے حشر میں پھر جی سے گزرنے والے

    یاں بھی پیدا ہوئے پھر آپ پہ مرنے والے

    چوس کر کس نے چھڑائی ہے مسی ہونٹھوں کی

    سامنے منہ تو کریں بات نہ کرنے والے

    شب ماتم کی اداسی ہے سہانی کتنی

    چھاؤں میں تاروں کی نکلے ہیں سنورنے والے

    ہم تو سمجھے تھے کہ دشمن پہ اٹھایا خنجر

    تم نے جانا کہ ہمیں تم پہ ہیں مرنے والے

    پی کے آئے ہیں کہیں ہاتھ نہ بہکے واعظ

    داڑھی کتریں نہ کہیں جیب کترنے والے

    سن ہی کیا ہے ابھی بچپن ہی جوانی میں شریک

    سو رہیں پاس مرے خواب میں ڈرنے والے

    ہاتھ گستاخ ہیں اٹھ جائیں نہ یہ دامن پر

    بچ کے نکلیں مرے مرقد سے گزرنے والے

    نزع میں حشر کے وعدے نے یہ تسکیں بخشی

    چین سے سو رہے منہ ڈھانپ کے مرنے والے

    اپنے دامن کو سنبھالے ہوئے بھولے پن سے

    وہ چلے آتے ہیں دل لے کے مکرنے والے

    صبر کی میرے مجھے داد ذرا دے دینا

    او مرے حشر کے دن فیصلہ کرنے والے

    آتی ہے حور جناں خلوت واعظ کے لئے

    قبر میں اتریں گے منبر سے اترنے والے

    تیرے عاشق جو گئے حشر میں یہ شور اٹھا

    جائیں دوزخ میں دم سرد کے بھرنے والے

    زیر پا دل ہی بچھے ہوں کہ ہیں خوگر اس کے

    فرش گل پر بھی نہیں پاؤں وہ دھرنے والے

    اشک غم ایسے نہیں ہیں جو امنڈ کر رہ جائیں

    ہیں یہ طوفان مرے سر سے گزرنے والے

    کیا مزا دیتی ہے بجلی کی چمک مجھ کو ریاضؔ

    مجھ سے لپٹے ہیں مرے نام سے ڈرنے والے

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY