جو شخص بھی ملا ہے وہ اک زندہ لاش ہے

افضل منہاس

جو شخص بھی ملا ہے وہ اک زندہ لاش ہے

افضل منہاس

MORE BYافضل منہاس

    جو شخص بھی ملا ہے وہ اک زندہ لاش ہے

    انساں کی داستان بڑی دل خراش ہے

    دامن دریدہ قلب و نظر زخم زخم ہیں

    اب شہر آرزو میں یہی بود و باش ہے

    بس اب تو رہ گئی ہے دکھاوے کی زندگی

    سانسوں کے تار تار میں ایک ارتعاش ہے

    مٹی نے پی لیا ہے حرارت بھرا لہو

    جوش نمو ملا تو بدن قاش قاش ہے

    کانٹوں نے بھی خزاں کی غلامی قبول کی

    دیکھو تو آج چہرۂ گل پر خراش ہے

    وہ دور اب کہاں کہ تمہاری ہو جستجو

    اس دور میں تو ہم کو خود اپنی تلاش ہے

    افضلؔ وہ بن سنور کے تو آ جائیں گے کبھی

    آئینۂ حیات مگر پاش پاش ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY