کبھی اول نظر آنا کبھی آخر ہونا

ظفر اقبال

کبھی اول نظر آنا کبھی آخر ہونا

ظفر اقبال

MORE BY ظفر اقبال

    کبھی اول نظر آنا کبھی آخر ہونا

    اور وقفوں سے مرا غائب و حاضر ہونا

    میں کسی اور زمانے کے لیے ہوں شاید

    اس زمانے میں ہے مشکل مرا ظاہر ہونا

    میں نہ ہونے پہ ہی خوش تھا مگر ایسے ہوا پھر

    مجھ کو ناچار پڑا آپ کی خاطر ہونا

    دور ہو جاؤں بھی اس باغ بدن سے لیکن

    کہیں ممکن ہی نہیں ایسے مناظر ہونا

    واقعی تم کو دکھائی ہی نہیں دیتا ہوں

    یا ضرورت ہے تمہاری مرا منکر ہونا

    راستہ آپ بنانا ہی کوئی سہل نہیں

    پھر اسی راستے کا آپ مسافر ہونا

    وہ مقامات مقدس وہ ترے گنبد و قوس

    اور مرا ایسے نشانات کا زائر ہونا

    بادلوں اور ہواؤں میں اڑا پھرتا میں

    کاش ہوتا مری تقدیر میں طائر ہونا

    کام نکلا ہے کچھ اتنا ہی یہ پیچیدہ ظفرؔ

    جتنا آساں نظر آیا مجھے شاعر ہونا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites