کبھی زمیں پہ کبھی آسماں پہ چھائے جا

حفیظ جالندھری

کبھی زمیں پہ کبھی آسماں پہ چھائے جا

حفیظ جالندھری

MORE BYحفیظ جالندھری

    کبھی زمیں پہ کبھی آسماں پہ چھائے جا

    اجاڑنے کے لیے بستیاں بسائے جا

    خضر کا ساتھ دیے جا قدم بڑھائے جا

    فریب کھائے ہوئے کا فریب کھائے جا

    تری نظر میں ستارے ہیں اے مرے پیارے

    اڑائے جا تہ افلاک خاک اڑائے جا

    نہیں عتاب زمانہ خطاب کے قابل

    ترا جواب یہی ہے کہ مسکرائے جا

    اناڑیوں سے تجھے کھیلنا پڑا اے دوست

    سجھا سجھا کے نئی چال مات کھائے جا

    شراب خم سے دیے جا نشہ تبسم سے

    کبھی نظر سے کبھی جام سے پلائے جا

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Hafeez Jalandhari (Pg. 447)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY