خوابوں سے نہ جاؤ کہ ابھی رات بہت ہے

صابر دت

خوابوں سے نہ جاؤ کہ ابھی رات بہت ہے

صابر دت

MORE BYصابر دت

    خوابوں سے نہ جاؤ کہ ابھی رات بہت ہے

    پہلو میں تم آؤ کہ ابھی رات بہت ہے

    جی بھر کے تمہیں دیکھ لوں تسکین ہو کچھ تو

    مت شمع بجھاؤ کہ ابھی رات بہت ہے

    کب پو پھٹے کب رات کٹے کون یہ جانے

    مت چھوڑ کے جاؤ کہ ابھی رات بہت ہے

    رہنے دو ابھی چاند سا چہرہ مرے آگے

    مے اور پلاؤ کہ ابھی رات بہت ہے

    کٹ جائے یوں ہی پیار کی باتوں میں ہر اک پل

    کچھ جاگو جگاؤ کہ ابھی رات بہت ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Mauje Aariz (Pg. 99)
    • Author : Mauje Aariz
    • مطبع : Sahir Publishing House, Mumbay (1992)
    • اشاعت : 1992

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY