کوئی تو آ کے رلا دے کہ ہنس رہا ہوں میں

شاذ تمکنت

کوئی تو آ کے رلا دے کہ ہنس رہا ہوں میں

شاذ تمکنت

MORE BYشاذ تمکنت

    کوئی تو آ کے رلا دے کہ ہنس رہا ہوں میں

    بہت دنوں سے خوشی کو ترس رہا ہوں میں

    سحر کی اوس میں بھیگا ہوا بدن تیرا

    وہ آنچ ہے کہ چمن میں جھلس رہا ہوں میں

    قدم قدم پہ بکھرتا چلا ہوں صحرا میں

    صدا کی طرح مکین جرس رہا ہوں میں

    کوئی یہ کہہ دے مری آرزو کے موتی سے

    صدف صدف کی قسم ہے برس رہا ہوں میں

    حیات عشق مجھے آج اجنبی نہ سمجھ

    کہ سایہ سایہ ترے پیش و پس رہا ہوں میں

    نفس کی آمد و شد بھی ہے سانحہ کی طرح

    گواہ رہ کہ ترا ہم نفس رہا ہوں میں

    جہاں بھی نور ملا کھل اٹھا شفق کی طرح

    جہاں بھی آگ ملی خار و خس رہا ہوں میں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    کوئی تو آ کے رلا دے کہ ہنس رہا ہوں میں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY