میں بھی بے انت ہوں اور تو بھی ہے گہرا صحرا

افتخار مغل

میں بھی بے انت ہوں اور تو بھی ہے گہرا صحرا

افتخار مغل

MORE BY افتخار مغل

    میں بھی بے انت ہوں اور تو بھی ہے گہرا صحرا

    یا ٹھہر مجھ میں یا خود میں مجھے ٹھہرا صحرا

    روح میں لہر بناتے ہیں تری لہروں سے

    اور کچھ دیر مرے سامنے لہرا صحرا

    آنکھ جھپکی تھی بس اک لمحے کو اور اس کے بعد

    میں نے ڈھونڈا ہے تجھے زندگی صحرا صحرا

    اپنی ہستی کو بکھرنے سے بچا لینا تم

    مجھ پہ مت جانا مری جان میں ٹھہرا صحرا

    میرے لہجے کا سمندر ہی نہیں سوکھا ہے

    لٹ گیا تیری ہنسی کا بھی سنہرا صحرا

    مآخذ:

    • کتاب : Quarterly TASTEER Lahore (Pg. 154)
    • Author : Naseer Ahmed Nasir
    • مطبع : Room No.-1,1st Floor, Awan Plaza, Shadman Market, Lahore (Issue No. 5,6 April To Sep. 1998)
    • اشاعت : Issue No. 5,6 April To Sep. 1998

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY