مرے دل بیچ نقش نازنیں ہے

فائز دہلوی

مرے دل بیچ نقش نازنیں ہے

فائز دہلوی

MORE BYفائز دہلوی

    مرے دل بیچ نقش نازنیں ہے

    مگر یہ دل نہیں یارو نگیں ہے

    کمر پر تیری اس کا دل ہوا محو

    ترا عاشق بہت باریک بیں ہے

    جو کہیے اس کے حق میں کم ہے بے شک

    پری ہے حور ہے روح الامیں ہے

    غلام اس کے ہیں سارے اب سریجن

    نگر میں حسن کے کرسی نشیں ہے

    نہیں اب جگ میں ویسا اور پیتم

    سبی خوش صورتاں سوں نازنیں ہے

    مجھے ہے موشگافی میں مہارت

    جو نت دل محو خط عنبریں ہے

    نظر کر لطف کی اے شاہ خوباں

    ترا فائزؔ غلام کم تریں ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Intekhab Kalam (Pg. 68)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY