مرحلہ دل کا نہ تسخیر ہوا

باقی صدیقی

مرحلہ دل کا نہ تسخیر ہوا

باقی صدیقی

MORE BYباقی صدیقی

    مرحلہ دل کا نہ تسخیر ہوا

    تو کہاں آ کے عناں گیر ہوا

    کام دنیا کا ہے تیر اندازی

    ہم ہوئے یا کوئی نخچیر ہوا

    سنگ بنیادی ہیں ہم اس گھر کا

    جو کسی طرح نہ تعمیر ہوا

    سفر شوق کا حاصل معلوم

    راستہ پاؤں کی زنجیر ہوا

    عمر بھر جس کی شکایت کی ہے

    دل اسی آگ سے اکسیر ہوا

    کس سے پوچھیں کہ وہ انداز نظر

    کب تبسم ہوا کب تیر ہوا

    کون اب داد سخن دے باقیؔ

    جس نے دو شعر کہے میرؔ ہوا

    مآخذ
    • کتاب : Bar-e-Safar (Pg. 30)
    • Author : Baqi Siddiqui
    • مطبع : Maktaba Urdu Daijest, Lahore (1969)
    • اشاعت : 1969

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY