مثال شعلہ و شبنم رہا ہے آنکھوں میں

شاذ تمکنت

مثال شعلہ و شبنم رہا ہے آنکھوں میں

شاذ تمکنت

MORE BY شاذ تمکنت

    مثال شعلہ و شبنم رہا ہے آنکھوں میں

    وہ ایک شخص جو کم کم رہا ہے آنکھوں میں

    کبھی زیادہ کبھی کم رہا ہے آنکھوں میں

    لہو کا سلسلہ پیہم رہا ہے آنکھوں میں

    نہ جانے کون سے عالم میں اس کو دیکھا تھا

    تمام عمر وہ عالم رہا ہے آنکھوں میں

    تری جدائی میں تارے بجھے ہیں پلکوں پر

    نکلتے چاند کا ماتم رہا ہے آنکھوں میں

    عجب بناؤ ہے کچھ اس کی چشم کم گو کا

    کہ سیل آہ کوئی تھم رہا ہے آنکھوں میں

    وہ چھپ رہا ہے خود اپنی پناہ مژگاں میں

    بدن تمام مجسم رہا ہے آنکھوں میں

    ازل سے تا بہ ابد کوشش جواب ہے شاذؔ

    وہ اک سوال جو مبہم رہا ہے آنکھوں میں

    مآخذ:

    • Book: Kulliyat-e- Shaz Tamkanat (Pg. 370)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites