مٹی تھا میں خمیر ترے ناز سے اٹھا

عبید اللہ علیم

مٹی تھا میں خمیر ترے ناز سے اٹھا

عبید اللہ علیم

MORE BYعبید اللہ علیم

    مٹی تھا میں خمیر ترے ناز سے اٹھا

    پھر ہفت آسماں مری پرواز سے اٹھا

    انسان ہو کسی بھی صدی کا کہیں کا ہو

    یہ جب اٹھا ضمیر کی آواز سے اٹھا

    صبح چمن میں ایک یہی آفتاب تھا

    اس آدمی کی لاش کو اعزاز سے اٹھا

    سو کرتبوں سے لکھا گیا ایک ایک لفظ

    لیکن یہ جب اٹھا کسی اعجاز سے اٹھا

    اے شہسوار حسن یہ دل ہے یہ میرا دل

    یہ تیری سر زمیں ہے قدم ناز سے اٹھا

    میں پوچھ لوں کہ کیا ہے مرا جبر و اختیار

    یارب یہ مسئلہ کبھی آغاز سے اٹھا

    وہ ابر شبنمی تھا کہ نہلا گیا وجود

    میں خواب دیکھتا ہوا الفاظ سے اٹھا

    شاعر کی آنکھ کا وہ ستارہ ہوا علیمؔ

    قامت میں جو قیامتی انداز سے اٹھا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    عبید اللہ علیم

    عبید اللہ علیم

    مآخذ
    • کتاب : Veeran sarai ka diya (Pg. 71)
    • کتاب : Veeran sarai ka diya (Pg. 71)
    • کتاب : Veeran sarai ka diya (Pg. 71)

    موضوعات:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY