مہیب رات کے گنجان پانیوں سے نکل

جاوید انور

مہیب رات کے گنجان پانیوں سے نکل

جاوید انور

MORE BYجاوید انور

    مہیب رات کے گنجان پانیوں سے نکل

    نئی سحر کے ستارے تو چمنیوں سے نکل

    ہر ایک حد سے پرے اپنا بوریا لے جا

    بدی کا نام نہ لے اور نیکیوں سے نکل

    اے میرے مہر تو اس کی چھتوں پہ آخر ہو

    اے میرے ماہ تو آج اس کی کھڑکیوں سے نکل

    نکل کے دیکھ تری منتظر قطار قطار

    عزیز دانۂ گندم تو بوریوں سے نکل

    تو میری نظم کے اسرار میں ہویدا ہو

    تو میرے کشف کی نادیدہ گھاٹیوں سے نکل

    اے پچھلی عمر ادھر سوکھی پتیوں میں آ

    اے اگلے سال بجھی موم بتیوں سے نکل

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    مہیب رات کے گنجان پانیوں سے نکل نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY