نامہ بر بھی وہاں رسا نہ ہوا

جوشؔ ملسیانی

نامہ بر بھی وہاں رسا نہ ہوا

جوشؔ ملسیانی

MORE BY جوشؔ ملسیانی

    نامہ بر بھی وہاں رسا نہ ہوا

    کسی صورت مرا بھلا نہ ہوا

    درد کی داد کون دے مجھ کو

    تو ہی جب درد آشنا نہ ہوا

    وہی مطلوب ہو وہی طالب

    اک معما ہوا خدا نہ ہوا

    مختصر بھی ہے اور جامع بھی

    کیا ہوا کا جواب کیا نہ ہوا

    ہاں کہو کچھ ہمیں بھی ہو معلوم

    وہ گلہ کیا جو برملا نہ ہوا

    عشق اس درد کا نہیں قائل

    جو مصیبت کی انتہا نہ ہوا

    تم سے تکمیل جور ہو نہ سکی

    اس ادا کا بھی حق ادا نہ ہوا

    اتنا پاس وفا تو ہے اس کو

    بے وفائی سے بے وفا نہ ہوا

    دل کشا تھی نگاہ ناز اس کی

    تیر کیوں اس کا دل کشا نہ ہوا

    دل کبھی خوش ہوا تو تھا لیکن

    اس کا اب ذکر کیا ہوا نہ ہوا

    قابل شکر ہے وہ صبر اے جوشؔ

    جو کبھی دست التجا نہ ہوا

    مآخذ:

    • کتاب : Fridaus-e-Gosh (Pg. 67)
    • Author : Josh Malsiyani
    • مطبع : Markaz-e-Tasneef wa Taleef nikodar (1963)
    • اشاعت : 1963

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY