نہیں جانے ہے وہ حرف ستائش برملا کہنا

صبیحہ صبا

نہیں جانے ہے وہ حرف ستائش برملا کہنا

صبیحہ صبا

MORE BYصبیحہ صبا

    نہیں جانے ہے وہ حرف ستائش برملا کہنا

    مگر نظروں ہی نظروں میں وہ اس کا واہ وا کہنا

    سر محفل کرے رسوا مرا بے ساختہ کہنا

    مرے فن کار یہ نازک خیالی واہ کیا کہنا

    مرے ناراض شانوں کو تھپک کر بارہا کہنا

    چلو چھوڑو گلے شکوے کبھی مانو مرا کہنا

    کوئی مصروفیت ہوگی وگرنہ مصلحت ہوگی

    نہ اس پیماں فراموشی سے اس کو بے وفا کہنا

    وفا تو خیر کیا ہوتی چلو یہ بھی غنیمت ہے

    مری بے بستگی کو خود رقیبوں کو برا کہنا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY