پوچھی تقصیر تو بولے کوئی تقصیر نہیں

مبارک عظیم آبادی

پوچھی تقصیر تو بولے کوئی تقصیر نہیں

مبارک عظیم آبادی

MORE BYمبارک عظیم آبادی

    پوچھی تقصیر تو بولے کوئی تقصیر نہیں

    ہاتھ جوڑے تو کہا یہ کوئی تعزیر نہیں

    ہم بھی دیوانے ہیں وحشت میں نکل جائیں گے

    نجد اک دشت ہے کچھ قیس کی جاگیر نہیں

    اک تری بات کہ جس بات کی تردید محال

    اک مرا خواب کہ جس خواب کی تعبیر نہیں

    کہیں ایسا نہ ہو کم بخت میں جان آ جائے

    اس لیے ہاتھ میں لیتے مری تصویر نہیں

    مآخذ:

    • کتاب : intekhaab-e-kalaam (Pg. 21)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY