رات آئی ہے بلاؤں سے رہائی دے گی

انور مسعود

رات آئی ہے بلاؤں سے رہائی دے گی

انور مسعود

MORE BYانور مسعود

    رات آئی ہے بلاؤں سے رہائی دے گی

    اب نہ دیوار نہ زنجیر دکھائی دے گی

    وقت گزرا ہے پہ موسم نہیں بدلا یارو

    ایسی گردش ہے زمیں خود بھی دہائی دے گی

    یہ دھندلکا سا جو ہے اس کو غنیمت جانو

    دیکھنا پھر کوئی صورت نہ سجھائی دے گی

    دل جو ٹوٹے گا تو اک طرفہ چراغاں ہوگا

    کتنے آئینوں میں وہ شکل دکھائی دے گی

    ساتھ کے گھر میں ترا شور بپا ہے انورؔ

    کوئی آئے گا تو دستک نہ سنائی دے گی

    مآخذ:

    • کتاب : Pakistani Adab (Pg. 368)
    • Author : Dr. Rashid Amjad
    • مطبع : Pakistan Academy of Letters, Islambad, Pakistan (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY