رخ زیبا ادھر نہیں کرتا

ظفر اقبال

رخ زیبا ادھر نہیں کرتا

ظفر اقبال

MORE BYظفر اقبال

    رخ زیبا ادھر نہیں کرتا

    چاہتا ہے مگر نہیں کرتا

    سوچتا ہے مگر سمجھتا نہیں

    دیکھتا ہے نظر نہیں کرتا

    بند ہے اس کا در اگر مجھ پر

    کیوں مجھے در بدر نہیں کرتا

    حرف انکار اور اتنا طویل

    بات کو مختصر نہیں کرتا

    نہ کرے شہر میں وہ ہے تو سہی

    مہربانی اگر نہیں کرتا

    حسن اس کا اسی مقام پہ ہے

    یہ مسافر سفر نہیں کرتا

    جا کے سمجھائیں کیا اسے کہ ظفرؔ

    تو بھی تو درگزر نہیں کرتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY