سچ ہے کہ وہ برا تھا ہر اک سے لڑا کیا

محمد علوی

سچ ہے کہ وہ برا تھا ہر اک سے لڑا کیا

محمد علوی

MORE BYمحمد علوی

    سچ ہے کہ وہ برا تھا ہر اک سے لڑا کیا

    لیکن اسے ذلیل کیا یہ برا کیا

    گلدان میں گلاب کی کلیاں مہک اٹھیں

    کرسی نے اس کو دیکھ کے آغوش وا کیا

    گھر سے چلا تو چاند مرے ساتھ ہو لیا

    پھر صبح تک وہ میرے برابر چلا کیا

    کوٹھوں پہ منہ اندھیرے ستارے اتر پڑے

    بن کے پتنگ میں بھی ہوا میں اڑا کیا

    اس سے بچھڑتے وقت میں رویا تھا خوب سا

    یہ بات یاد آئی تو پہروں ہنسا کیا

    چھوڑو پرانے قصوں میں کچھ بھی دھرا نہیں

    آؤ تمہیں بتائیں کہ علویؔ نے کیا کیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY