سنگ طفلاں فدائے سر نہ ہوا

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

سنگ طفلاں فدائے سر نہ ہوا

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BYوحشتؔ رضا علی کلکتوی

    سنگ طفلاں فدائے سر نہ ہوا

    آج اس کوچے میں گزر نہ ہوا

    ہم بھی تھے جوہر گراں مایہ

    پر کوئی صاحب نظر نہ ہوا

    امن عالم میں کیوں نہیں یا رب

    اس کے قابل مگر بشر نہ ہوا

    بے کسی پردہ دار درد ہوئی

    خیر گزری کہ اپنا گھر نہ ہوا

    قدردانی کی کیفیت معلوم

    عیب کیا ہے اگر ہنر نہ ہوا

    سر جھکائے جو آتے ہو وحشتؔ

    مگر اس بزم میں گزر نہ ہوا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    سنگ طفلاں فدائے سر نہ ہوا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY