سر تسلیم ہے خم اذن عقوبت کے بغیر

عرفان صدیقی

سر تسلیم ہے خم اذن عقوبت کے بغیر

عرفان صدیقی

MORE BYعرفان صدیقی

    سر تسلیم ہے خم اذن عقوبت کے بغیر

    ہم تو سرکار کے مداح ہیں خلعت کے بغیر

    سر برہنہ ہوں تو کیا غم ہے کہ اب شہر میں لوگ

    برگزیدہ ہوئے دستار فضیلت کے بغیر

    دیکھ تنہا مری آواز کہاں تک پہنچی

    کیا سفر طے نہیں ہوتے ہیں رفاقت کے بغیر

    عشق میں میرؔ کے آداب نہ برتو کہ یہاں

    کام چلتا نہیں اعلان محبت کے بغیر

    ریت پر تھک کے گرا ہوں تو ہوا پوچھتی ہے

    آپ اس دشت میں کیوں آئے تھے وحشت کے بغیر

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    سر تسلیم ہے خم اذن عقوبت کے بغیر نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY