صرف چہرہ ہی نظر آتا ہے آئینہ میں

خلیل مامون

صرف چہرہ ہی نظر آتا ہے آئینہ میں

خلیل مامون

MORE BYخلیل مامون

    صرف چہرہ ہی نظر آتا ہے آئینہ میں

    عکس آئینہ نہیں دکھتا ہے آئینہ میں

    سلسلہ یاد کا جب ذہن میں جاگ اٹھتا ہے

    ایک دریا سا امڈ آتا ہے آئینہ میں

    اپنی آنکھوں کو کبھی غور سے جب دیکھتا ہوں

    نور چہرہ ترا جاگ اٹھتا ہے آئینہ میں

    روتے روتے جو کبھی پڑتی ہے اس سمت نظر

    کوئی نمناک دیا جلتا ہے آئینہ میں

    کبھی ایسا بھی ہوا ہے کہ شب فرقت میں

    عکس ابھر کر ترا کھو جاتا ہے آئینہ میں

    تیرے چہرہ کی ہنسی دیکھ کے یوں لگتا ہے

    پھول جیسے کوئی کھل اٹھتا ہے آئینہ میں

    کیا خبر کیسا لگے عکس جو باہر آ جائے

    اس کو رہنے دو وہیں اچھا ہے آئینہ میں

    اس میں جو ڈوبا کبھی وہ نہ ابھرنے پایا

    موجزن ایک سیہ دریا ہے آئینہ میں

    آئینہ خانہ میں کیا ہم سے چھپا ہے مامونؔ

    ہم نے کیا کیا نہ بھلا دیکھا ہے آئینہ میں

    مآخذ:

    • کتاب : Sanson Ke Paar (Pg. 113)
    • Author : Khalil Mamoon
    • مطبع : Educational Publishing House, Delhi (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY